Card image cap
ٹی 20 کی دنیا کا نیا حکمران کون؟ فیصلہ آج، پاکستان اور انگلینڈ مد مقابل

انٹرنیشنل کرکٹ کونسل کے زیراہتمام آسٹریلیا میں جاری آٹھواں آئی سی سی مینز ٹی ٹونٹی ورلڈ کپ کرکٹ ٹورنامنٹ اپنے اختتامی مراحلے میں داخل ہے ، میگا ایونٹ میں شائقین کرکٹ کو انتہائی دلچسپ اور کانٹے دار مقابلے دیکھنے کو مل رہے ہیں۔ میگا ایونٹ کے چیمپئن کا فیصلہ 13 نومبر کو میلبورن میں ہوگا۔ میلبورن میں اس روز بارش کا بھی امکان ہے۔

 

اس سے قبل مینز ٹی ٹونٹی ورلڈ کپ کے پہلے سیمی فائنل میچ میں پاکستان نے نیوزی لینڈ کو 7 وکٹوں سے شکست دے کر فائنل کے لئے کوالیفائی کیا تھا جبکہ میگا ایونٹ کے دوسرے سیمی فائنل میچ میں انگلش ٹیم نے بھارت کو 10 وکٹوں سے عبرتناک شکست دے کر فائنل کیلئے کوالیفائی کیا تھا۔ دونوں ٹیمیں اس سے قبل ایک ایک مرتبہ ٹی ٹونٹی ورلڈ کپ کی چیمپئن رہ چکی ہیں۔

پاکستان نے 2009ء کے مینز ٹی ٹونٹی ورلڈ کپ میں سری لنکا کو شکست دے کر ٹائٹل اپنے نام کیا جبکہ انگلینڈ نے 2010ء کے ورلڈ کپ میں آسٹریلیا کو شکست دے کر چیمپئن ہونے کا اعزاز حاصل کیا۔ ویسٹ انڈیز واحد ٹیم ہے جس نے دو مرتبہ ٹی ٹونٹی ورلڈ کپ اپنے نام کیا۔ ویسٹ انڈیز نے 2012اور 2016، بھارت نے 2007، سری لنکا2014ء اور آسٹریلیا نے 2021ء میں ٹی ٹونٹی ورلڈ کپ کا تاج اپنے سر سجایا۔

آسٹریلیا میں جاری آٹھویں مینز ٹی ٹونٹی ورلڈ کپ کی دلچسپ بات یہ ہے کہ ورلڈ کپ 1992اور ٹی ٹونٹی ورلڈ کپ 2022میں حیران کن مماثلت سامنے آنے لگی، 30 سال بعد تاریخ ایک مرتبہ پھر اپنے آپ کو دہرانے لگی۔ 1992کا ورلڈ کپ پاکستان نے جیتا جبکہ اس ورلڈ کپ کی میزبانی آسٹریلیا نے کی تھی ۔ رواں ٹی ٹونٹی ورلڈ کپ 2022کا میزبان بھی آسٹریلیا ہی ہے۔ 1992میں دفاعی چیمپئن پہلے ہی رائونڈ میں ٹورنامنٹ سے باہر ہوا، 2022میں کینگروز دفاعی چیمپئن تھے مگر سیمی فائنل میں نہ پہنچ سکے۔

پاکستان 1992کے عالمی کپ میں پہلے پانچ میچوں میں سے صرف ایک میچ جیتا تھا جبکہ اس بار پہلے 3 میں سے 2 میچوں میں شکست ہوئی اور صرف ایک میچ جیتا۔ 1992میں بھی اگر مگر کی صورتحال تھی، آسٹریلیا نے ویسٹ انڈیز کو شکست دی تو پاکستان سیمی فائنل کے لئے کوالیفائی کر گیا۔

اس مرتبہ نیدرلینڈز نے جنوبی افریقہ کو شکست دے کر پاکستان کی سیمی فائنل کی راہ ہموار کی۔ 30 سال پہلے بھی پاکستان کا سیمی فائنل مقابلہ نیوزی لینڈ کے ساتھ تھا اس مرتبہ بھی پاکستان نے سیمی فائنل میں نیوزی لینڈ کو شکست دے کر فائنل کے لئے کوالیفائی کیا۔ حیران کن بات یہ ہے کہ 1992کے عالمی کپ کے فائنل میں پاکستان کا مقابلہ انگلینڈ کے ساتھ تھا اور رواں ٹی ٹونٹی ورلڈ کپ 2022کے فائنل میں پاکستان کا مقابلہ انگلینڈ کے ساتھ ہو گا۔پاکستان کی ٹیم میگا ایونٹ کا فائنل کھیلنے کے لئے پہلے ہی میلبورن پہنچ چکی ہے۔

دوسری جانب میلبرن سے کرکٹ شائقین کیلئے اچھی خبر آگئی، میلبرن میں گزشتہ رات کی بارش کے بعد صبح بادل چھٹ گئے، دھوپ نکل آئی، آج پاکستان اور انگلینڈ کے فائنل میچ میں بھی وقفے وقفے سے بارش کا امکان ہے تاہم میلبرن میں آج بارش کے امکانات مزید کم ہوگئے ہیں۔

 

ملبرن میں آج کہیں دھوپ، کہیں بادل ہیں، بارش کے مجموعی امکانات 95 فیصد سے کم ہو کر 46 رہ گئے ہیں، شام 7 بجے بارش کے امکانات 41 فیصد اور آٹھ بجے بارش کا امکان44 فیصد تک رہ گیا ہے، رات 9 بجے سے 11 کے درمیان بارش کے 53 فیصد سے 65 فیصد امکانات ہیں۔


ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ کے پہلے سیمی فائنل میں نیوزی لینڈ کا پاکستان کیخلاف بیٹنگ کا فیصلہ

ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ کے پہلے سیمی فائنل میں نیوزی لینڈ کی ٹاس جیت کر پاکستان کے خلاف بیٹنگ جاری ہے۔

سڈنی میں پہلے اوور میں ہی شاہین شاہ آفریدی نے کیوی اوپنر کو واپس پویلین بھیج دیا۔میچ کی تیسری گیند پر شاہین آفریدی نے فن ایلن کو 4 رنز پر ایل بی ڈبلیو آؤٹ کیا۔

نیوزی لینڈ کے جارحانہ بیٹر ڈیون کونوے کو چھٹے اوور میں شاداب خان نے رن آؤٹ کیا۔

محمد نواز نے 8 ویں اوور میں 49 کے اسکور پر اپنی ہی گیند پر کیوی بیٹر گلین فلپس کا کیچ پکڑ کر پاکستان کو تیسری کامیابی دلوائی۔

سیمی فائنل میچ کے لیے پاکستان ٹیم میں بابر اعظم، شاداب خان، محمد رضوان، شان مسعود، افتخار احمد، محمد حارث، محمد نواز، محمد وسیم جونیئر، شاہین شاہ آفریدی، نسیم شاہ اور حارث رؤف شامل ہیں۔

کپتان کین ولیمسن، فن ایلن، ڈیرل مچل، گلین فلپس، ڈیون کونوے، ٹرینٹ بولٹ، ٹم ساؤتھی، لوکی فرگوسن، جمی نیشم، مچل سینٹنر اور ایش سودھی کیوی ٹیم کا حصہ ہیں

ٹی 20 ورلڈ کپ: سنسنی خیز مقابلہ، بھارت کی بنگلا دیش کو 5 رنز سے شکست

آسٹریلیا کے شہر ایڈیلیڈ میں گروپ 2 اور میگا ایونٹ کا 35واں میچ بھارت اور بنگلا دیش کے مابین کھیلا گیا جبکہ دوسری اننگز بارش کے باعث 16 اوورز تک محدود کردی گئی۔

بھارت اننگز

پاکستان کے روایتی حریف نے پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے مقررہ 20 اوورز میں 6 وکٹ کے نقصان پر 184 رنز بنائے، ویرات کوہلی نے 1 چھکے اور 8 چوکوں کی مدد سے 44 گیندوں پر 64 رنز کی ناقابل شکست اننگز کھیلی، اوپنر کے ایل راہول 4 چھکوں اور 3 چوکوں کی مدد سے 32 گیندوں پر 50 سکور بناکر پویلین لوٹے، سوریا کمار یادیو نے 30 رنز کی اننگز کھیلی۔

بنگال ٹائیگرز کی جانب سے حسن محمود نے سب سے زیادہ 3 جبکہ شکیب الحسن نے 2 وکٹ اپنے نام کیں۔

بنگلا دیش اننگز

185 رنز ہدف کے تعاقب میں بنگلا دیش کی بیٹنگ شروع ہوئی تو اس دوران بارش کے باعث میچ روک دیا گیا، میچ دوبارہ شروع ہوا تو ڈک ورتھ لوئس میتھڈ کے تحت اننگز 16 اوورز تک محدود کرتے ہوئے 151 رنز کا ہدف کردیا گیا۔

لٹن داس کی 3 چھکوں اور 7 چوکوں کی مدد سے 27 گیندوں پر کھیلی گئی 60 رنز کی اننگز بھی رائیگاں گئی، نجم الحسن شانتو بھی 21 رنز بناکر پویلین لوٹ گئے، کپتان شکیب الحسن بھی صرف 13 رنز بناکر آؤٹ ہوگئے جبکہ اس کے بعد بنگال ٹائیگرز کی وکٹیں تیزی سے گرنے لگیں، نورالحسن نے 25 اور تسکین احمد نے 12 رنز ناٹ آؤٹ بنائے۔

ارشدیب سنگھ اور ہاردیک پانڈیا نے 2،2 جبکہ محمد شامی نے ایک وکٹ اپنے نام کی۔

اس طرح بنگال ٹائیگرز نے 16 اوورز میں 6 وکٹ کے نقصان پر 145 رنز بنائے۔

 

پاک فوج کے اکاؤنٹ کی خبریں جھوٹ، امدادی رقوم حکومت کو ہی دیں: آئی ایس پی آر

پاک فوج کے اکاؤنٹ کی خبریں جھوٹ، امدادی رقوم حکومت کو ہی دیں: آئی ایس پی آر