12

حیدرآباد میں 22ہزار بچوں کو پولیو قطرے نہ پلوائے جاسکے

حیدرآباد میں بچوں کو پولیو سے بچاؤ کے قطرے پلانے کی مہم محکمہ صحت کے لیے چیلنج بن کر رہ گئی ہے۔

حیدرآباد میں پولیو کے دو نئے کیس سامنے آنے کے بعد تین روزہ پولیو مہم کے دوران 22 ہزار بچوں کو پولیو کے قطرے نہ پلوائے جاسکے جن میں 3154 بچے وہ ہیں جن کے والدین قطرے پلانے کے خلاف ہیں۔

ذرائع کے مطابق محکمہ صحت کی جانب سے حیدرآباد میں پولیو کے دو نئے کیس سامنے آنے کے بعد حیدرآباد کے علاقے قاسم آباد اور لطیف آباد میں ڈھائی لاکھ سے زائد بچوں کو پولیو سے بچاؤ کے قطرے پلانے کی مہم شروع کی گئی، تین روزہ مہم کے دوران 22 ہزار بچوں کو قطرے نہیں پلائے جاسکے۔

ان میں سے 3154 بچوں کو والدین مسلسل قطرے پلانے سے انکار کررہے ہیں۔ ان میں اکثریت پختون برادری کی ہے جو وانا وزیرستان سے آکر شفٹ ہوئے ہیں۔

انسداد پولیو مہم کے فوکل پرسن ڈاکٹر جمشید نے جیو نیوز کو بتایا کہ حیدرآباد ضلع کے علاقوں لطیف آباد ،قاسم آباد میں مہم جاری ہے، دیہی حیدرآباد میں پالیسی کے تحت مہم نہیں چلائی گئی جو بچے رہ گئے ہیں انہیں مکمل کرلیا جائے گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں