111

منشیات کیس میں گرفتار رانا ثناءاللہ نے درخواست ضمانت واپس لے لی

 لاہور ہائیکورٹ نے  منشیات سمگلنگ کے کیس میں گرفتار سابق صوبائی وزیر قانون اور مسلم لیگ (ن) کے رکن اسمبلی رانا ثناء اللہ کی درخواست ضمانت واپس لینے کی بنیاد پر نمٹا دی۔مزید خبریں:شہر میں موٹرسائیکل سوار ڈاکوؤں کا گروہ سرگرم

لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس سید شہباز رضوی نے راناثناءاللہ کی درخواست ضمانت پر سماعت کی،دوران سماعت رانا ثناءاللہ کے وکیل اعظم نذیر تارڑ پیش ہوئے اور بتایا کہ ابھی ٹرائل کورٹ میں رانا ثناءاللہ کے حقائق منظر عام پر آنا باقی ہیں، اس بنیاد پر وہ درخواست ضمانت واپس لینا چاہتے ہیں، عدالت نے درخواست واپس لینے کی بنیاد پر نمٹا دی۔

رانا ثناءاللہ کی جانب سے درخواست میں اے این ایف کے تفتیشی افسر کو فریق بنایا گیا، درخواست میں موقف اختیارکیا گیا کہ حکومت پر سخت تنقید کرتا رہا ہوں، جس بنا پر جھوٹا مقدمہ بنا دیا گیا، ایف آئی آر تاخیر سے درج کی گئی جو مقدمہ کو مشکوک ثابت کرتی ہے، ایف آئی آرمیں 21 کلو گرام ہیروئن لکھی گئی، بعد میں اس کا وزن 15 کلو گرام ظاہر کیا گیا۔

درخواستگزار کے وکیل نے نقطہ اٹھایا کہ رانا ثناءاللہ نے گرفتاری سے قبل گرفتاری کے خدشے کا اظہار کیا تھا، اب بے بنیاد مقدمہ میں گرفتار کر لیا گیا، منشیات سمگلنگ کے مقدمہ میں ضمانت پر رہا کرنے کا حکم دیا جائے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں