329

مغوی سرجن گھر آگئے، ڈاکٹروں کا بائیکاٹ ختم نہ ہوا

کوئٹہ میں اغواء ہونے والے نیورو سرجن ڈاکٹر ابراہیم خلیل کے منظر عام پر آجانے کے باوجود ڈاکٹروں کی جانب سے سرکاری اسپتالوں کی او پی ڈیز میں بائیکاٹ ہنوز جاری ہے۔

کوئٹہ میں سرکاری اسپتالوں کی او پی ڈیز ڈاکٹروں کے بائیکاٹ کے باعث بند ہیں اور او پی ڈیز کی بندش کے باعث مریضوں کو مشکلات اور پریشانی کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔

بائیکاٹ کا یہ سلسلہ ڈاکٹرز ایکشن کمیٹی کی جانب سے نیورو سرجن ڈاکٹر ابراہیم خلیل کے اغواء کے بعد تقریباً ڈیڑھ ماہ قبل شروع کیا گیا تھا، تاہم یہ اب بھی جاری ہے۔

ڈاکٹر ابراہیم خلیل گزشتہ روز بازیاب ہو کر کوئٹہ میں اپنے گھر پہنچ گئے تھے،اس حوالے سے ڈاکٹر ایکشن کمیٹی کے چیئرمین ڈاکٹر ظاہر مندوخیل کا کہنا تھا کہ ڈاکٹر ابراہیم خلیل کو تقریباً 5 کروڑ روپے تاوان ادا کر کے چھوڑا گیا ہے۔

دوسری جانب ترجمان ڈاکٹرز ایکشن کمیٹی ڈاکٹر رحیم بابر کا کہنا ہے کہ او پی ڈیز کے بائیکاٹ سے متعلق فیصلہ آج جنرل باڈی کے اجلاس میں ہو گا۔

انہوں نے مزید کہا کہ بائیکاٹ دو مطالبات تسلیم کیے جانے کے حوالے سے کیا گیا تھا، ایک مطالبہ ڈاکٹر ابراہیم خلیل کی بازیابی اور دوسرا ڈاکٹروں کے لیے مؤثر سیکیورٹی کی فراہمی سے متعلق تھا۔

ڈاکٹر رحیم بابر نے یہ بھی کہا کہ ڈاکٹر ابراہیم خلیل تاوان ادا کر کے واپس آئے ہیں، انہیں بازیاب نہیں کرایا گیا، تاہم آج کے اجلاس میں اس حوالے سے آئندہ کا لائحہ عمل طے کیا جائے گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں