165

شہریوں کا لاہورپولیس سے اعتماد ختم ہونے لگا

لاہور پولیس کرائم چھپانے کے ساتھ ساتھ شہریوں کی شکایات بھی پس پشت ڈالنے لگی، ڈی ائی جی اپریشنز اور انوسٹی گیشن کوسٹیزن پورٹل پرموصول ہونے والی ستر فیصد شکایات پرجاری کیے جانے والے احکامات سے شہری مطمئن نہ ہوئے، ائی جی پنجاب شعیب دستگیر نے روائتی کاروائیوں کی بجائے شکایات کو میرٹ پر نمٹانے کا حکم کے ساتھ ساتھ کارکردگی بہتربنانے کی ہدایت جاری کردی۔

مزید خبریں: بزرگ شہریوں کو 2 ہزار روپے ماہانہ وظیفہ دینے کا اعلان
تفصیلات کے مطابق شہریوں کا لاہورپولیس سے اعتماد ختم ہونے لگا، لاہور پولیس شہریوں کوشکایات پر کارروائی سے مطمئن کرنےمیں مکمل ناکام ہو گئی ہے۔ لاہورپولیس کرائم چھپانے کے ساتھ ساتھ شہریوں کی شکایات بھی پس پشت ڈالنے لگی ہے، وزیراعظم سٹیزن پورٹل پرموصول شکایات پر کارروائیاں نہ ہونے کے برابر ہیں۔ لاہورپولیس شہریوں کی شکایات کو روایتی طریقے سے نمٹانے لگی اور 70فیصد شہریوں کی شکایات افسران کی روایتی مارکنگ کی نذر ہونے لگیں ہیں اور شہری وزیراعظم سٹیزن پورٹل پردی جانے والی شکایات پر کارروائی سے غیر مطمئن ہیں۔

دوسری جانب آئی جی پنجاب شعیب دستگیر نے شہریوں کی جانب سے پولیس پربڑھتے ہوئے عدم اطمینان کا نوٹس لے لیا ہے اور آئی جی پنجاب کی جانب سے ڈی آئی جی آپریشنز، ڈی آئی جی انویسٹی گیشنز کو معاملات کو بہتر کرنے کا حکم بھی دے دیا گیا ہے اور شہریوں کی شکایات پر فوری عملدرآمد کرنے کا حکم بھی جاری کردیا گیا ہے۔

آئی جی پنجاب شعیب دستگیر کا کہنا تھا کہ سٹیزن پورٹل پر شکایات پر کارروائیوں سے شہریوں کو مطمئن کیا جائے، دفاتر میں آنے والی شکایات کو بھی فوری طور پرنمٹا یاجائے، عوام کی خدمت پولیس کا پہلامشن ہے، عوامی شکایات پر تمام افسران ایمانداری سے عملدرآمد کریں۔

مزید خبریں:آوارہ کتوں کے شہریوں پر وار جاری، مزید 36 کیسز رپورٹ
آئی جی پنجاب شعیب دستگیر کا مزید کہنا تھا کہ شہریوں کی شکایات کو صرف فائلوں کا حصہ نہ بنایا جائے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں