33

افغانستان میں انسانی اور معاشی بحران کا سدباب ضروری ہے،وزیر خارجہ

یونیسیف کی ایگزیکٹو ڈائریکٹر کیتھرین رسل کی وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی سے ملاقات, وزیر خارجہ کاکہنا تھا کہ ہم دنیا بھر کے بچوں کے لیے یونیسیف کے اہم کام کی مکمل حمایت کرتے ہیں اور اپنے مسلسل قریبی تعاون کے منتظر ہیں

اسلام آباد میں یونیسیف کی ایگزیکٹو ڈائریکٹر کیتھرین رسل نے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی سے ملاقات کی ،اس موقع پر وزیر خارجہ نے بطور ایگزیکٹو ڈائریکٹر یونیسف ذمہ داریاں سنبھالنے پر کیتھرین رسل کو مبارکباد پیش کی کہا کہ ہم دنیا بھر کے بچوں کے لیے یونیسیف کے اہم کام کی مکمل حمایت کرتے ہیں اور اپنے مسلسل قریبی تعاون کے منتظر ہیں، انہوں نے کہا کہ پاکستان بچوں کے حقوق کے حوالے سے بین الاقوامی سطح پر ایک اہم آواز کے طور پر جانا جاتا ہے، وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ ترقی پذیر ملک ہونے کے ناطے پاکستان کو بچوں سے متعلق حقوق کے تحفظ کے حوالے سے کئی چیلنجز کا سامنا ہے، حکومت پاکستان بچوں سے متعلقہ پائیدار ترقی کے اہداف (SDGs) کے حصول کے لیے پوری طرح پرعزم ہے۔ انکا کہنا تھا کہ پاکستان نے بچوں کے حقوق کے تحفظ کے لیے مختلف قانونی، پالیسی اور ادارہ جاتی اقدامات کیے، حقوق کے تحفظ کیلئے ایک آزاد قومی کمیشن قائم کیا گیا۔
وزیر خاجہ شاہ محمودقریشی نے بتایا کہ حکومت سکولوں میں بچوں کے داخلے کی شرح میں اضافے کیلئے مسلسل کوشاں ہے، اس ضمن میں یونیسف کے تعاون کے متمنی ہیں۔ وزیر خارجہ نے پاکستان میں بچوں کو حفاظتی ٹیکوں کی سہولت کی فراہمی میں یونیسیف کے تعاون کو سراہا ۔ وزیر خارجہ شاہ محمودقریشی نے کہا کہ کورونا وباء کے خلاف جنگ میں یونیسف کا تعاون قابلِ ستائش رہا ،پاکستان نے کورونا وباء کو شکست دینے کیلئے جامع حکمت عملی اپنائی۔

مقبوضہ جموں و کشمیر میں بھارتی مظالم پر بات کرتے ہوئے شاہ محمودقریشی کا کہنا تھا کہ مقبوضہ جموں و کشمیر میں انسانی صورتحال، بچوں اور خواتین کے انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کا تسلسل قابلِ تشویش ہے،جنگوں، تشدد، طویل تنازعات اور غیر ملکی قبضوں سے متاثرہ علاقوں میں بچے زیادہ غیر محفوظ ہیں جن کیلئے عالمی سطح پر لائحہ عمل وضع کرنے کی ضرورت ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں