26

چاند کی ’’خاموشی‘‘ اور ’’تاریک پہلو‘‘ سے پردہ اُٹھنے کو ہے

یوں تو چاند ابتدائی ادوار سے ہی انسان کی دل چسپی کا مرکز رہا ہے اور قدیم زمانے سے اس کے متعلق طرح طرح کے قصے اور کہانیاں مشہور رہی ہیں ،مگر گزشتہ ایک صدی کے دوران بہتر ذرائع اور اعلیٰ ٹیکنالوجی کی بدولت چاند کو تسخیر کرنے کی کوششوں میں تیزی آتی گئی۔ اب تک چاند کی جانب جتنے بھی مشن بھیجے گئے ہیں وہ صرف اس کے سامنے والے حصے یا رخ تک ہی رسائی حاصل کرسکے ہیں ۔ اپولو الیون مشن میں نیل آرم اسٹرانگ نے بھی چاند کے اسی حصے پر پہلا قدم رکھ کر تاریخ رقم کی تھی ، مگر سائنس داں اب تک چاند کے دوسرے تاریک حصے سے ناواقف تھے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں