100

ایران میں عوامی مقامات پر کتّوں پر پابندی

ایران کے دار الحکومت تہران میں عوامی مقامات پرپالتو کتّوں کے ساتھگھومنے اور انہیں گاڑی میں ساتھ سوار کرانے پر پابندی عائد کر دی گئی ہے۔

تہران پولیس چیف نے اس بات کا اعلان سرکاری نیوز ایجنسی سے بات چیت کرتے ہوئے کیا۔

پولیس چیف کے مطابق یہ قانون ایسے لوگوں پر لاگو ہو گا جو پارک میں اپنے پالتو کتوں کے ساتھ چہل قدمی کے لئے آتے ہیں۔

ان کا کہنا تھا ایسے لوگوں کے خلاف قانونی چارہ جوئی کی جائے گی جو گاڑی میں اپنے ساتھ کتّوں کو سوار کراتے ہیں۔

پولیس چیف کا مزید کہنا تھاکہ اس پابندی کا نفاذ اس لئے کیا گیا کیونکہ کتّوں کے وجود سے دوسرے شہری خوف میں مبتلا ہو جاتے ہیں۔

سنہ 2000 کے اوائل میں پولیس نے پالتو کتّوں کے مالکان کے خلاف کریک ڈاؤن بھی کیا تھا۔اس کے علاوہ کتوں سے پھیلنے والی بیماریوں کے بارے میں بھی شہریوں کو آگاہی دی گئی تھی۔

واضح رہے ایران میں 1979 کے اسلامی انقلاب کے بعد کتے پالنا اور ان کے ساتھ عوامی مقامات پر گھومنے پھرنے کو متنازع عمل قرار دیا گیا تھا ۔

ایران انتظامیہ کی نظر میں کتے ’ناپاک‘ ہوتے ہیں اور ان کے مطابق کتے پالنا مغربی پالیسی کی علامت ہے۔

پانچ سال قبل پارلیمان میں اس بات پر زوردیا جا چکا ہے کہ کتوں کے ساتھ چہل قدمی کرنے والوں کو جرمانہ اور یہاں تک کے کوڑوں کی سزا بھی دینی چاہیے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں